0

ڈاکٹرلکڑبھگا؛ جو دماغی اور نفسیاتی علاج کرتا ہے

موغا دیشو: افریقہ میں اب بھی لوگ روایتی اور عجیب و غریب طریقے سے اپنا علاج کراتے ہیں اور اب وہاں کے مرکزی شہر موغادیشو میں لوگ بڑی تعداد میں اپنی فکری پریشانیوں اور ڈپریشن کے لیے ایک لکڑبھگے کے پاس آرہے ہیں جسے اب ڈاکٹر لکڑ بھگے کا نام دیا گیا ہے۔
اب بھی اس ملک میں ہر قسم کے نفسیاتی بیماریوں اور ڈپریشن کو جنوں، آسیب اور بھوت پریت کا اثر سمجھتے ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ افریقہ میں ان امراض کے لیے جھاڑ پھونک کا عمل عام ہے اور اب اس لوگ لکڑ بھگے جیسے جانور سے اپنا علاج کروارہے ہیں۔موغادیشو ایک انتہائی غریب ملک ہے جہاں نفسیاتی معالجین کی شدید قلت ہے۔ عالمی ادارہ برائے صحت کے مطابق برسوں کی خانہ جنگی سے پیشہ ور ڈاکٹر اس ملک سے جاچکے ہیں اور اب پورے صومالیہ میں صرف تین مستند نفسیاتی معالج ہی بچے ہیں۔موغادیشو کے لوگ اس جانور سے علاج کروارہے ہیں جن میں ڈپریشن کا شکار محمد یعقوب بھی شامل ہے۔ تاہم صومالیہ میں ترک ہسپتال کے ڈاکٹروں نے کہا ہے کہ لکڑ بھگے سیعلاج کا کوئی سائنسی ثبوت نہیں اور نہ ہی اس سے کوئی فائدہ ہوسکتا ہے۔اسی طرح موغادیشو کے ایک سند یافتہ نفسیاتی معالج ڈاکٹر حبیب نے صومالی باشندوں سے کہا ہے کہ وہ کسی بھی طرح اپنی بیماری کیلیے لکڑ بھگے کے پاس نہ جائیں۔ تاہم صومالیہ میں بڑھتے ہوئے مریضوں کا اصرار ہے کہ ان کے پاس کوئی اور راستہ نہیں اور اسی وجہ سے وہ اپنا علاج ایک جانور سے کرانے پر مجبور ہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں