Get Adobe Flash player

چا لیس سال کی کرپشن سے اتنا نقصان نہیں ہوا جتنا دھرنوں سے ہوا،فضل الرحمن

جمعیت علمائے اسلام (ف) کے سربراہ مولانا فضل الرحمن نے کہا ہے کہ ملک میں بچگانہ اور غیر سنجیدہ سیاست ہورہی ہے ، دھرنوں نے ملک کا بیڑہ غرق کردیا ، اتنا نقصان چالیس سال کی کرپشن سے نہیں ہوا جتنا چالیس روز کے دھرنوں سے ہوا ، حکومت میرے حملہ آوروں کے نام بتائے ورنہ ذمہ داری قبول کرے ، کچھ لوگ جموریت کی بساط لپیٹنے کے درپے ہیں ، حکومت پانچ سال پورے کرے گی ، قبائلی معاملات قبائلی روایات کے مطابق حل ہونا چاہیے ۔ ملتان میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے مولانا فضل الرحمن نے کہا کہ ملک میں غیر سنجیدہ اور بچگانہ سیاست ہورہی ہے قوم کو بچے کی سیاست سے واسطہ پڑا ہوا ہے دھرنے ناکام ہوچکے ہیں سیاسی صورتحال کو مجموعی تناظر میں دیکھنا چاہیے دھرنوں نے ملک کا بیڑہ غرق کردیا ہے اتنا نقصان چالیس سال کی کرپشن سے نہیں ہوا جتنا چالیس روز کے دھرنے سے ہوا لیکن سازشیں پکڑی گئیں ہیں دھرنے ناکام ہوگئے لہذا اب فکر کی کوئی بات نہیں ہے جو استعفے لینے آئے تھے وہ استعفے دیکر جارہے ہیں جوڈیشل کمیشن کی پیشکش وزیراعظم نے کی عمران خان کہتے ہیں کہ میں کمیشن کو نہیں مانتا کل وہ کہے گا میں تو اپنے آپ کو ہی نہیں مانتا دھرنے والے کیا چاہتے تھے وہ سب کے سامنے آگیا جوڈیشل کمیشن صرف ایک نہیں تمام انتخابات کا جائزہ لے گا اگر دھاندلی ثابت ہوگئی تو ہمیں حکومت میں رہنے کا کوئی جواز نہیں ہوگا ایک سوال پر مولانا فضل الرحمن کا کہنا تھا کہ خیبر پختونخواہ میں تحریک عدم اعتماد نا کام نہیں مشاورت سے واپس ہو ئی ہے ہم نے اسمبلیوں کو بچانے کا فیصلہ کیا تھا اور خیبر پختونخوا اسمبلی میں وزیر اعلیٰ پرویز خٹک کے خلاف تحریک عدم اعتماد کو پیش کرنے کا مقصد بھی یہی تھا۔ جس طرح استعفے دینے کا عمل ناکام ہوا اسی طرح اسمبلیوں کی تحلیل کا منصوبہ بھی ناکام ہوا تو ہم نے تحریک واپس لے لی۔