شام میں ہر ماہ 5 ہزار افراد مر رہے ہیں، اقوامِ متحدہ کا الز ام

اقوامِ متحدہ کے ایک اعلیٰ عہدیدار نے الزام عائد کیا ہے کہ شام کی حکومت امدادی سامان کو بھی ایک جنگی ہتھیار کے طور پر استعمال کر رہی ہے جس کے باعث لاکھوں افراد کی زندگیاں دائو پر لگی ہوئی ہیں۔ عالمی ادارے کی امدادی سرگرمیوں کے نگران ادارے او سی ایچ اے کے ڈائریکٹر جان جنگ کے مطابق شام میں جاری بحران اس حد تک پھیل چکا ہے کہ اب ملک کا کوئی علاقہ ایسا نہیں رہا جہاں موت اور تباہی رقص نہ کرتی ہو۔غیر ملکی میڈیا کو دیئے گئے انٹرویو میں عالمی ادارے کے عہدیدار نے بتایا کہ شام میں ہر ماہ پانچ ہزار افراد ہلاک ہورہے ہیں اور اب تک شام کی خانہ جنگی ڈیڑھ لاکھ انسانی جانیں نگل چکی ہے۔اقوامِ متحدہ کے اعداد و شمار کے مطابق شام کی خانہ جنگی سے 96 لاکھ شامی باشندے بری طرح متاثر ہوئے ہیں