سعودی شہری نے ایک ارب ریال کی رقم مسلمانوں کی بھلائی کیلئے عطیہ کر دی

سعودی عرب کے ایک عمر رسیدہ مخیر نے اپنا نام اور شناخت ظاہر کیے بغیر ایک ارب ریال کی خطیر رقم اسلامی ترقیاتی بنک کو عطیہ کی ہے۔ایک عرب ٹی وی کے مطابق نامعلوم سعودی صاحب کی ہدایت پر اسلامی ترقیاتی بنک اس رقم سے اسلامی تعاون تنظیم کے رکن مسلمان ملکوں اور غیر مسلم ریاستوں میں موجود مسلم کمیونٹیز کے دیہی اور پسماندہ علاقوں میں 75 موبائل ڈسپنسریاں قائم کرے گا۔ اسلامی ترقیاتی بنک کے چیئرمین ڈاکٹر احمد محمد نے میڈیا کو بتایا کہ سعودی مخیر شہری کی عطیہ کردہ رقم سے پاکستان، بھارت اور یمن میں پندرہ، افغانستان اور بنگلادیش میں دس اور تاجکستان اور قرغیزستان میں پانچ پانچ موبائل اسپتال پانچ سال کے لیے قائم کرے گا۔ پانچ سال بعد دوسرے پسماندہ ممالک کے دیہاتوں میں اسپتال قائم کیے جائیں گے۔ انہوں نے سعودی مخیر کی جانب سے دیے گئے عطیہ پر ان کی سخاوت کی تعریف کی اور ان کا شکریہ ادا کیا۔ انہوں نے کہا کہ اس خطیر رقم کے سے لاکھوں مستحق مریض استفادہ کریں گے۔ اسلامی ترقیاتی بنک سعودی مخیر کی شرائط کے مطابق اس کی فراہم کی گئی رقم کو صرف کرنے کا پابند رہے گا۔ ڈاکٹر احمد نے عالم اسلام کے صاحب ثروت لوگوں سے اپیل کہ وہ سعودی مخیر کے نقش قدم پر چلتے ہوئے اسلامی ترقیاتی بنک کے پلیٹ فارم سے بڑھ چڑھ کر عطیات مہیا کریں تاکہ پوری مسلم دنیا کے غریب اور پسماندہ علاقوں میں شہریوں کو طبی سہولیات فراہم کی جا سکیں۔