Get Adobe Flash player

امریکہ کی پہلی خاتون کے ٹو سر کرنے میں کامیاب

امریکہ کی پہلی خاتون دنیا کی دوسری بلند چوٹی کے ٹو کو سر کرنے میں کامیاب ہو گئی ہے، 52 سالہ ونیسا اوبرائن جولائی کے پہلے ہفتے میں کے ٹو کے بیس کیمپ پہنچی تھیں جس کے بعد انہوں نے اپنی مہم کا آغاز کیا تھا، انہوں نے کے ٹو پر پاکستانی پرچم بھی لہرایا۔الپائن کلب کے مطابق ونیسا جمعے کو پہاڑ کی چوٹی پر پہنچیں، ونیسا نے ٹوئٹر پر اپنی مہم کے بارے میں تصاویر اور پیغامات شیئر کیے ہیں، انہوں نے کے ٹو کی چوٹی پر پاکستان کا جھنڈا بھی لہرایا، اس کی تصویر کے ساتھ انہوں نے پیغام لکھا پاکستان کا پرچم ان اہم جھنڈوں میں سے ایک ہے جو میں کے ٹو کی چوٹی پر لے کر گئی اور پاکستان ایک ایسا ملک جس میں مجھے بہت زیادہ محبت اور سپورٹ ملی۔ انہوں نے بھرپور معاونت پر پاکستان کے نامور کوہ پیما نذیر صابر کا شکریہ بھی ادا کیا۔ونیسا نے کہا ہے کہ ماضی میں دنیا کی بلند ترین چوٹی مانٹ ایورسٹ بھی سر کر چکی ہوں، جب آپ ایورسٹ سر کرتے ہیں تب دنیا آپ کو کوہ پیما کے طور پر جانتی ہے لیکن جب آپ کے ٹو سر کرتے ہیں تو آپ کوہ پیماں کی نظر میں کوہ پیما کہلاتے ہیں۔واضح رہے کوہ پیماں کے نزدیک وحشی پہاڑ کے نام سے مشہور کے ٹو کو سر کرنا تکنیکی لحاظ سے کافی مشکل ہے اور چوٹی پر پہنچنے اور نیچے آنے کی کوشش میں ہر 4 میں سے ایک کو پیما کی موت ہوتی ہے۔ اب تک کے ٹو کو 377 کوہ پیما سر کر چکے ہیں جن میں سے 18 امریکی ہیں، ونیسا پہلی امریکی اور مجموعی طور پر دنیا کی دوسری بڑی چوٹی سر کرنے والی 18 ویں خاتون ہیں