زراعت کے شعبے میں لائیوسٹاک کا حصہ 58.33فیصد ہے

لائیوسٹاک کا شعبہ ملکی زراعت میں کلیدی اہمیت کا حامل ہے اورجاری مالی سال میں زراعت کے شعبے میں لائیوسٹاک کا حصہ 58.33فیصد ہے۔ ماہرین کے مطابق پاکستان میں لائیو اسٹاک کا شعبہ جدید اصلاحات اور ٹیکنالوجی کے استعمال کے سبب گوشت اور ڈیری کی ملکی ضروریات پوری کرنے کے علاوہ بیرون ملک برآمدات کے ذریعہ قیمتی زرمبادلہ کمانے کی بھی بھرپور صلاحیت رکھتا ہے۔حکومت اس شعبے کی ترقی کو اولین ترجیح دے رہی ہے اور اس ضمن میں بین الاقوامی ترقیاتی اداروں سے بھی معاونت حاصل کی جارہی ہے۔یوا ین پی کے مطابق پاکستان عرب ممالک کے علاوہ ایران، افغانستان اور دیگر ممالک کو ڈیری اور گوشت کی مصنوعات برآمد کرنے سے قیمتی زرمبادلہ کما کر دیہی معیشت کو مستحکم کرنے کی بھرپور صلاحیتیں رکھتا ہے۔ لائیو اسٹاک کے شعبہ کی ترقی سے دیہی خواتین کیلئے آمدنی کے وسائل میں نمایاں اضافہ کو ممکن بنایا جاسکتا ہے۔ایک اندازے کے مطابق ملکی برآمدات میں لائیوسٹاک کے شعبہ کی برآمدات کا حصہ 13 فیصد ہے جبکہ لائیوسٹاک کے شعبہ سے لاکھوں افراد کا براہ راست روزگار وابستہ ہے۔ مجموعی قومی پیداوار (جی ڈی پی) میں زراعت کے شعبہ کا حصہ 21 فیصد ہے۔ لائیوسٹاک کے شعبہ کے اعدادوشمار کے مطابق جاری مالی سال میں زراعت کے شعبے میں لائیوسٹاک کا حصہ 58.33فیصدہے، رواں مالی سال میں اس شعبے کی ترقی کی شرح 3.43فیصد ریکارڈ کی گئی جبکہ گزشتہ سال یہ شرح 3.36فیصد ریکارڈ کی گئی تھی۔