جولائی تا مئی ٹیکس ریونیو میں مزید 20 ارب روپے کے شارٹ فال کا خدشہ

 رواں مالی سال کے پہلے گیارہ ماہ (جولائی تا مئی)کے دوران ٹیکس وصولیوں کے شارٹ فال میں مزید 20 ارب روپے سے زائد کے شارٹ فال کا خدشہ پیدا ہوگیا ہے۔اس ضمن میں ذرائع نے بتایا کہ فیڈرل بورڈ آف ریونیو(ایف بی آر) کو رواں ماہ(مئی)کیلئے مقرر کردہ 234.1 ارب روپے کی ٹیکس وصولیوں کا ہدف حاصل کرنے کیلئے آئندہ دس روز کے دوران 136ارب روپے کی ٹیکس وصولیاں کرنا ہونگی۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ ایف بی آر کے عبوری اعدادوشمار کے مطابق رواں ماہ(مئی)میں اب تک مجموعی طور پر اٹھانوے ارب روپے کی ٹیکس وصولیاںہوئی ہیں جبکہ رواں ماہ کیلئے ٹیکس وصولیوں کا ہدف 234.1 ارب روپے مقرر کیا گیا ہے جبکہ گزشتہ مالی سال کے اسی عرصے میں 174ارب روپے کی ٹیکس وصولیاں ہوئی تھیں۔ذرائع کا کہنا ہے کہ اگرچہ اگلے چندروز میں تھری جی اور فور جی اسپیکٹرم خریدنے والی ٹیلی کام کمپنیوں کی طرف سے کی جانیوالی ادائیگیوں پر حاصل ہونیوالے ٹیکس سے ریونیو میں اضافہ ہوگا مگر اس کے باوجود شارٹ فال زیادہ رہنے کی توقع ہے۔ ذرائع نے بتایا کہ اگرٹیلی کام کمپنیاں اسپیکٹرم کی قیمت خرید کا پچاس فیصد حصہ جمع کرواتی ہیں تو اس صورت میں ایف بی آر کو پانچ سے چھ ارب روپے کا اضافی ریونیو حاصل ہوگا اور اگر ودہولڈنگ ٹیکس سو فیصد رقم پر ادا کیا جاتا ہے تو اس صورت میں بارہ سے تیرہ ارب روپے کا اضافی ریونیو حاصل ہوگا۔