لاہوراور پنجاب کے دیگر شہروں میں ینگ ڈاکٹرز کی ہڑتال جاری

لاہور سمیت پنجاب کے دیگر شہروں میں ینگ ڈاکٹرز کی ہڑتال جاری، مریضوں کو شدید پریشانی کا سامنا ہے۔تفصیلات کے مطابق ینگ ڈاکٹرز نے ہسپتالوں میں مریضوں کو سسکتا چھوڑ کرچوتھے روز بھی ہڑتال جاری رکھی اور مریضوں کی پریشانی پر بھی ینگ ڈاکٹرز کو رحم نہ آیا جس پر سینئر ڈاکٹرز نے چارج سنبھال لیا ۔ مریضوں اور لواحقین کے مطابق ڈاکٹروں کے احتجاج کا خمیازہ ہر بار کی طرح غریب عوام کو ہی بھگتنا پڑتا ہے۔واضح رہے کہ گزشتہ روز لاہور میں ینگ ڈاکٹرز اور صوبائی حکومت درمیان ہونے والے طویل مذاکرات ناکام ہوگئے تھے جس کے بعد ینگ ڈاکٹرز نے ہڑتال چوتھے روز بھی جاری رکھتے ہو ئے او پی ڈی کھولنے سے انکار کردیا تھا۔ملتان میں ینگ ڈاکٹرز نے حکومت سے مذاکرات کے بعد گزشتہ روز سے ایمرجنسی میں کام شروع کردیا ہے تاہم ان ڈور اور آوٹ ڈور میں اب بھی ہڑتال جاری ہے۔ ینگ ڈاکٹرز کی ہڑتال کے باعث مریضوں کے علاج معالجہ میں دشواری کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے اوران کے لواحقین علاج کے لیے در در کی ٹھوکریں کھانے پر مجبور ہیں۔فیصل آباد کے سرکاری اسپتالوں میں ینگ ڈاکٹرز ایمرجنسی میں کام کر رہے ہیں لیکن ان ڈور وارڈز اور آٹ ڈور وارڈز میں ہڑتال ہے، جبکہ الائیڈ اور سول اسپتال میں ہونے والے معمول کے آپریشن بھی ملتوی کردیئے گئے ہیں۔اس کے علاوہ رحیم یار خان ،گجرات اور گوجرانوالہ کے سرکاری اسپتالوں میں بھی ینگ ڈاکٹرز کی ہڑتال کی وجہ سے دور دراز سے آنے والے مریضوں کو مشکلات کا سامنا ہے۔کراچی میں بھی سندھ نرسنگ ایگزامینیشن بورڈ کے خلاف نرسنگ اسٹوڈنٹس دوسرے روز بھی سراپا احتجاج ہیں، احتجاج میں جے پی ایم سی اسکول آف نرسنگ ، این آئی سی ایچ کی نرسز شامل ہیں۔نرسز کامطالبہ ہے کہ امتحانات میں شفافیت کو نظرانداز کیاگیا،ہم نتائج سے مطمئن نہیں،لہذا دوبارہ امتحانات لییجائیں،جب تک ہمارے مطالبات منظورنہیں ہوتے احتجاج جاری رہیگا۔