نواز شریف کا تاجروں سے کیا گیا منصفانہ کرایہ داری کے نفاذ کا وعدہ پورا کریں

ٹریڈرز ایکشن کمیٹی اسلام آباد کے عہدیداران کا غیر رسمی اجلاس مرکزی انجمن تاجران پاکستان کے صدر اجمل بلوچ کی صدارت میں منعقد ہوا ، ایک قرار داد کے ذریعے شاہد خاقان عباسی کو وزارت عظمیٰ کا منصب سنھبالنے پر مبارک باد دیتے ہوئے مطالبہ کیا کہ وہ میاں نواز شریف کا اسلام آباد کے تاجروں سے کیا گیا منصفانہ کرایہ داری کے نفاذ کا وعدہ پورا کریں، ایک دوسری قرارداد میں چیف جسٹس پاکستان ثاقب نثار سے مطالبہ کیا گیا کہ کرایہ داری کا موجودہ قانون چونکہ بنیادی انسانی حقوق کے خلاف ہے اس لئے اس قانون کے تحت چلنے والے تمام مقدمات کی سماعت روک دی جائے، اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے اجمل بلوچ نے کہا کہ وزارت عظمیٰ کا منصب سنھبالنے کے بعد میاں نواز شریف نے اسلام آباد ہوٹل میں وفاقی درالحکومت کی تاجر برادری کو خطاب کرتے ہوئے اسلام آباد میں منصفانہ قانونِ کرایہ داری کے نفاذ کا وعدہ کیا تھا جو چار سال گذرنے کے باوجود پورا نہ ہوسکا ۔ ایم این اے میاں عبدالمنان اور ایم این اے اسد عمر نے ترمیمی بل پیش کئے لیکن ضلع انتظامیہ اور دیگر سٹیک ہولڈرز کی منظوری کے باوجود بل اسمبلی سے منظور نہ کرایا جاسکا ۔ انہوں نے وزیر اعظم شاہدخاقان عباسی سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ اسمبلی کی مدت پوری ہونے سے قبل تاجروں سے میاں نواز شریف کی طرف سے کیا گیا وعدہ پورا کرائیں۔ اسلام آباد چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری کے سابق سینئر نائب صدر اور ٹریڈرز ایکشن کمیٹی اسلام آباد کے سیکرٹری خالد چوہدری نے اس موقع پر اپنے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ منصفانہ قانون کرایہ داری کی عدم موجودگی کی وجہ سے کاروباری حلقہ سخت پریشان ہے اور ہر وقت بے دخلی کی تلوار سر پر لٹکتی رہتی ہے ۔ انہوں نے مزید کہا کہ موجودہ قانون بنیادی انسانی حقوق کی خلاف ورزی ہے جس میں صرف مالکان جائیداد کے حقوق کو تحفظ دیا گیا ہے جبکہ اس میں فیصلہ کے خلاف اپیل کا حق بھی نہیں دیا گیا ہے۔ انہوں نے چیف جسٹس پاکستان ثاقت نثار سے اپیل کی کہ وہ موجودہ قانون کے تحت ہونے والے مقدمات کی سماعت رکوائیں انہوں نے وفاقی وزیر داخلہ احسن اقبال سے اپیل کی کہ وہ آئی ٹین مرکز کے پچاس دکانداروں سمیت تمام بے دخلیوں پر پابندی عائد کریں۔