Get Adobe Flash player

انتخابی اصلاحات کے لئے پیش رفت کے بعد مظاہروں کا جواز نہیں

تحریک انصاف کے چند سو کارکنوں نے گزشتہ جمعہ کو بھی الیکشن کمیشن سے کچھ فاصلے پر مئی 2013ء کے انتخابات میں مبینہ دھاندلیوں پر احتجاج کیا ' یاد رہے کہ تحریک انصاف  کے فیصلے کے مطابق ہر جمعہ کو اس کے کارکن ایمبیسی روڈ سے ایک جلوس کی صورت میں نعرہ بازی کرتے ہوئے الیکشن کمیشن تک پہنچنے کی کوشش کرتے ہیں مگر پولیس کی طرف سے نادرا چوک اور بعض دیگر علاقوں میں شدید ناکہ بندیوں کے باعث ہدف ستک نہیں  بچ سکتے چنانچہ دیر تک نعرے بازی کے بعد واپس روانہ ہو جاتے ہیں اگرچہ اوائل کے دو تین مظاہروں کے دوران تحریک انصاف کے کارکنوں کو پولیس کے لاٹھی چارج کا سامنا  بھی کرنا پڑا تاہم گزشتہ جمعہ قدرے پرامن رہا اور اس کی وجہ کارکنوں کی تعداد میں بھی نمایاں کمی ہے۔ اس موقع پر تحریک انصاف کے ایڈیشنل سیکرٹری جنرل سیف اللہ خان نیازی اور مرکزی وائس چیئرمین شاہ محمود قریشی نے خطاب کیا کہ تحریک انصاف کے احتجاج کا مقصد جمہوریت کو نقصان پہنچایا ہرگز نہیں ہے بلکہ صحت مند اصلاحات کے ذریعے جمہوریت کو مستحکم اور مضبوط بنانا ہے یہاں اس امر کا تذکرہ ضروری ہے کہ تحریک انصاف اور پاکستان پیپلزپارٹی سمیت بعض جماعتوں کی طرف سے اس بات کا مطالبہ کیا گیا کہ مستقبل میں الیکشن کو زیادہ شفاف اور شہبات سے بالاتر رکھنے کیلئے مزید انتخابی اصلاحات لائی  جائیں چنانچہ حکومت نے اس درست مطالبے کو تسلیم کرتے ہوئے قومی اسمبلی اور سینٹ کی مشترکہ پارلیمانی کمیٹی قائم کرنے کیلئے قومی اسمبلی کے سپیکر اور  چیئرمین سینٹ کو خط لکھے ہیں یہ کمیٹی آئینی اصلاحات کمیٹی کی طرز پر کام کرے گی اور انتخابی اصلاحات کے سلسلے میں تمام جماعتوں کی تجاویز کی روشنی میں اپنی سفارشات مرتب کرے گی جنہیں بعدازاں آئینی و قانونی شکل دی جائے گی ہم سمجھتے ہیں اس مطالبے کو تسلیم کئے جانے کے بعد تحریک انصاف کے الیکشن کمیشن کے خلاف ہفتہ وار مظاہروں کا کوئی جواز باقی نہیں رہتا جہاں تک کسی مخصوص حلقے میں کسی بے ضابطگی یا دھاندلی کی شکایت کا تعلق ہے اس کا تدارک الیکشن کمیشن کے پلیٹ فارم یا عدلتی نظام کے ذریعے ہی ممکن ہے مظاہروں' دھرنوں اور نعرے بازی سے ان شکایات کا ازالہ نہیں ہوسکتا اس شدید گرمی میں پارٹی کارکنوں کو ایک غلط فیصلے کا  ایندھن بنانا اور انہیں مشتعل کرکے پولیس کے ساتھ ان کے تصادم کا ماحول پیدا کرنے کی کوشش کرنا' جمہوری فکر ہے نہ کارکنوں کے ساتھ انصاف ہے۔