ارسلان افتخار کا عمران خان کے خلاف ریفرنس دائر کرنے کا فیصلہ

سپریم کورٹ کے سابق چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری کے صاحبزادے ارسلان افتخار نے تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان کے خلاف آرٹیکل62اور63کی خلاف ورزی کی روشنی میں ریفرنس دائر کرنے کا اعلان کیاہے اس مقصد کے حصول کے لئے انہوں نے الیکشن کمیشن کو متعلقہ ریکارڈ کے حصول کے لئے درخواست دی ہے تحریک انصاف کے چیئرمین نے11مئی2013کے انتخابات کے سلسلے میں اگر ایک طرف الیکشن کمیشن پر بے سروپا الزامات عائد کئے ہیں تو دوسری طرف اس وقت کے چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری کو بھی نہیں بخشا جن کا ریٹرننگ افسروں کی براہ راست تقرری کے امور سے کوئی سروکار نہ تھا یہی نہیں انہوں نے ارسلان افتخار پر بھی مبینہ طور پر بدعنوانی کے الزامات عائد کئے ہیں حال ہی میں جب وزیر اعلی بلوچستان نے صوبے کے سرمایہ کاری بورڈ کے وائس چیئرمین کی حیثیت سے ان کی تقرری کی اس وقت بھی عمران خان نے نہ صرف ارسلان افتخار پر متعدد بے بنیاد الزامات عائد کئے بلکہ خواہ مخواہ وزیراعظم اور وفاقی حکومت کو بھی اس معاملہ میں ملوث کرنے کی کوشش کی تاہم وزیر اعلی بلوچستان نے فوری طور پر یہ کہہ کر ان کے الزام کی قلعی کھول دی کہ اس تقرری کے سلسلے میں انہیں وفاق کی طرف سے کسی نے نہیں کہاتھا بلکہ یہ ان کا ذاتی فیصلہ تھا بہرحال ان کے اس فیصلے پر شدید تنقید کے بعد ارسلان افتخار سے وائس چیئرمین کے منصب سے استعفے لے لیا گیا اس طرح اب سابق چیف جسٹس اور ان کے صاحبزادے کے خلاف تحریک انصاف کے الزامات کے معاملہ نے اس حد تک سنگین صورت اختیار کر لی ہے کہ ارسلان افتخار نے عمران خان کو نااہل قرار دینے کے لئے قانونی بنیادوں پر ریفرنس دائر کرنے کا اعلان کر دیاہے یہاں اس امر کا تذکرہ بھی ضروری ہے کہ جب چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری اپنے منصب پر موجود تھے اس وقت بھی عمران خان نے بعض ایسے الفاظ استعمال کئے تھے جو اعلی عدلیہ کی توہین کے زمرے میں آتے تھے اور عدلیہ نے اس پر انہیں توہین عدالت کا نوٹس جاری کیاتھاجس کے بعد انہوں نے معافی مانگ لی تھی اس تذکرے سے یہ واضح کرنا مقصود ہے کہ تحریک انصاف کے چیئرمین بہت پہلے سے ہی سابق چیف جسٹس کے خلاف مخصوص منفی رویہ رکھتے ہیں ارسلان افتخار کاموقف ہے کہ عمران خان نے اپنے کاغذات نامزدگی میں کوائف درست بیان نہیں کئے وہ آرٹیکل62اور63پر پورے نہیں اترتے اس لئے ان کی کامیابی کالعدم قرار دی جائے میڈیا سے بات چیت کے دوران ارسلان افتخار کا کہناتھا کہ عمران خان نے کاغذات نامزدگی میں اپنے دونوں بیٹوں کا ذکر تو کیا ہے لیکن امریکی خاتون سیتا وائٹ کے بطن سے پیداہونے والی اپنی بیٹی ٹیریان خان کا ذکر نہیں کیا جسے امریکہ کی ایک عدالت عمران خان کی بیٹی قرار دے چکی ہے انہوں نے کہا کہ وہ اس بناء پر ان کے خلاف نااہلی کا ریفرنس دائر کریں گے کہ وہ صادق اور امین نہیں رہے اس طرح سیاسی الزامات کی جنگ اب قانونی جنگ کا رخ اختیارکرتی جارہی ہے جس کا سب سے زیادہ نقصان تحریک انصاف کو ہی ہوگا اس قسم کے مسائل محض عمران خان کے غیر ذمے دارانہ طرزعمل کا نتیجہ ہیں جنھیں ان پر کسی دوسرے نے مسلط نہیں کیا بلکہ انہوں نے انہیں خود دعوت دی ہے۔