Get Adobe Flash player

بلوچستان کے امن اور اس کی ترقی کے لئے پاک فوج کا عزم

کوئٹہ گیریژن میںفوجی افسروں اور جوانوں سے خطاب کرتے ہوئے آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ نے بہت خوبصورت بات کہی کہ پاک فوج پاکستانی عوام کی فوج ہے اور عوام کی حمایت سے ملک و قوم کے دفاع اور دہشت گردی سے نجات دلانے کے لئے اپنے فرائض انجام دیتی رہے گی انہوں نے کہا کہ بلوچستان کی ترقی' خوشحالی اور اسے امن کا گہوارہ بنانا ہماری ترجیحات میں شامل ہے بلوچستان کے عوام کو دوسرے صوبوں کے عوام کے برابر ترقی دینا ہمارا بنیادی مقصد ہے اس موقع پر آرمی چیف کو بریفنگ میں بتایا گیا کہ بلوچستان میں پاک فوج' ایف سی' پولیس اور دیگر سیکورٹی اداروں کی کارروائیوں کے نتیجے میں فرقہ وارانہ ٹارگٹ کلنگ میں نمایاں کمی واقع ہوئی ہے تاہم دہشت گرد اب سیکورٹی اداروں کو نشانہ بنا رہے ہیں جن کے خلاف موثر کارروائی کی جارہی ہے۔بلاشبہ بلوچستان میں دہشت گردی کے واقعات میںنمایاں کمی واقع ہوئی ہے خصوصاً فرقہ وارانہ ٹارگٹ کلنگ کے واقعات پر قابو پالیا گیا ہے مستونگ میں کامیاب کارروائی کے نتیجے میں سیکورٹی فورسز نے غار میں موجود دہشت گردوں کے جس اہم ٹھکانے کو تباہ کیا اس کے بعد فرقہ وارانہ ٹارگٹ کلنگ کے واقعات میں زبردست کمی آئی ہے بلکہ اگر یہ کہا جائے تو غلط نہ ہوگا کہ اس ٹھکانے کے  خاتمہ کے بعد اس نوعیت کا کوئی واقعہ رونما نہیں ہوا۔تاہم اس کے بعد پولیس پر تواتر سے حملے ہونے لگے ہیں دہشت گرد اب بلوچستان میں آخری ہچکیاں لے رہے ہیں۔ یہ امر خوش آئند ہے کہ پاک فوج نے صوبے میں دہشت گردی کے خلاف کامیاب کارروائیوں کے ساتھ اس صوبے کے ترقیاتی کاموں پر بھی توجہ دی ہے۔ پاک فوج نئے تعلیمی ادارے اور کیڈٹ کالج قائم کئے ہیں جن سے صوبے کے طلباء مستفید ہو رہے ہیں فوج میں بھی صوبے کے پانچ ہزار کے لگ بھگ نوجوانوں کو ملازمتیں فراہم کی گئی ہیں متعدد سڑکیں بھی پاک فوج نے تعمیر کی ہیں بلوچستان کے عوام کو دوسرے صوبوں کے عوام کے برابر لانے کے سلسلے میں حکومت اور پاک فوج دونوں اپنی اپنی سطح پر موثر کوششیں کر رہے ہیں آرمی چیف نے بجا طور پر کہا کہ پاک فوج ایک عوامی فوج ہے اور عوام کی حمایت سے ہی اس نے دہشت گردی سمیت تمام محاذوں پر کامیابی حاصل کی ہے ملک کی ترقی اور اس کے دفاع کے لئے پاک فوج' عوام اور تمام آئینی اداروں نے مل کر اپنے اپنے حصے کا کردار ادا کرنا ہے' ترقی اور دفاع کو اجتماعی کردار سے ہی یقینی بنایا جاسکتا ہے۔