Get Adobe Flash player

September 2017

11 September 2017

برمی سفارت خانے تک احتجاجی ریلی۔۔۔میر افسر امان

آٹھ ستمبر کو جماعت اسلامی اسلام آباد نے مسجد شہدا آبپارہ سے برمی سفارت خانے تک جانے کے لیے روہنگیا کے مظلوم مسلمانوں کے حق میں ایک احتجاجی ریلی نکالی۔ شہر اسلام آباد میں اس ریلی کی تشہیر کے لیے خوبصورت بینر لگائے گئے ۔ ریلی میں شریک ہونے کے لیے اسلام آباد کی گلی گلی میں ہینڈ بل تقسیم کیے گئے۔ شہر کی مساجد کے خطیبوں سے جماعت اسلامی کے ذمہ داروں نے ملاقاتیں کیں۔ان سے درخواست کی کہ جمعہ کے خطبے میں روہنگیا کے مسلمانوں کے ساتھ بدھ مذہب کے پیرو کاروں کے مظالم کو نمازیوں کے سامنے بیان کیا جائے۔ ان کے حق میں نکالی جانے والی ریلی میں شرکت کی اپیل کی جائے۔ بیشتر مساجد میں خطیبوں نے برما کے صوبہ روہنگیا کے مسلمانوں پر بدھ مذہب کے پیروکاروں کے ساتھ ان کی فوج نے مل کر جو مظالم کیے ہیں ان پر روشنی ڈالی۔ اس اپیل پر شہر کی مساجد سے لوگ جلوس کی شکل میں اس احتجاجی ریلی میں شریک ہوئے۔ جماعت اسلامی پاکستان کے نائب امیر میاں محمد اسلم صاحب نے تمام مکتبہ فکر کے علماسے ملاقاتیں کر کے اس ریلی میں شرکت کی درخواست کی۔اس سلسلے میں ریلی سے ایک دن پہلے پریس کانفرنس بھی کی گئی۔ جماعت اسلامی کے سوشل میڈیا ونگ نے اس کی خوب تشہیر کی۔ اخبارات میں ایک دن پہلے اس ریلی کے متعلق خبریں شائع ہوئی۔ نتیجتاً اس ریلی میں تمام مکتبہ فکر کے لوگ اپنے اپنے جھنڈے لیے شریک ہوئے جس میں اہل سنت الجماعت کے علما اور عوام کے ساتھ ساتھ ان کے  پنجاب صوبائی اسمبلی کے ممبر شریک ہوئے۔بریلوی حضرات کے علما اپنے لوگوں کے ساتھ شریک ہوئے۔جمعیت اسلام مولانا فضل الرحمان صاحب کے لوگ اس ریلی میں شریک ہوئے۔مسلم اسٹوڈنٹ فیڈر یشن کے لوگ شریک ہوئے۔اسلام آباد شہر کی کاروباری حضرات کی تنظیموں کے عہدادار اس احتجاجی ریلی میں شریک ہوئے۔ شہر کی ٹراسپورٹ یونین، مزدور یونین کے کارکنوں اور سول سوسائٹی کے نمایندے بھی شریک ہوئے۔ اسلام آباد بار کے عہدیدار اور وکیل حضرات بھی شریک ہوئے۔ جماعت اسلامی اور اس کی ذیلی تنظیم جے آئی یوتھ کے کارکن بھاری تعداد میں شریک ہوئے۔جہاں تک میانمار میں مسلمانوں پر مظالم کا معاملہ ہے تو کافی عرصہ یہ مظالم جاری ہیں۔ کچھ عرصہ پہلے مسلم دشمن میانمار کی حکومت نے مسلمانوں سے امتیازی سلوک کرتے ہوئے بدنام زمانہ ایک کالا قانون پاس کیا تھا کہ ١٨٢٣ء کے بعد میانمار میں داخل ہونے والے شہریوں کی شہریت منسوخ کر دی گئی۔ جبکہ تاریخی طور پر ثابت ہے کہ عرب مسلمان تاجر آٹھویں صدی عیسوی سے میانمار میں آباد ہو گئے تھے۔ کالے قانون کے خلاف میانمار کے مسلمانوں نے احتجاج کیا۔ ١٩٢٠ء سے مسلمانوں پر بدھ مذہب کے بھکشو اپنی سیکورٹی فورسز سے مل کر مسلمانوں کی نسل کشی کر رہے ہیں۔ اب ایک سو میل تک کے مسلمان بستی کا صفایا کر دیا گیا۔ لوگوں کے گلے کاٹ کر ان کی لاشوں کو آگ میںجلا دیا گیا۔اقوام متحدہ اور ہیومین رائٹس کی بین الاقوامی تظیموں نے اس پر میانمار کی حکومت سے صرف رسمی احتجاج کیا۔ ہزاروں لوگ سمندر اور جنگلوں میں دربدر جان بچانے کے لیے بھاگ گئے۔ ہزاروں لوگ بنگلہ دیش میں پناہ کے لیے داخل ہو گئے۔ ترکی کے مرد مجاہد کے علاوہ کسی مسلمان ملک نے ان مظلوموں کی مدد نہیں کی بلکہ ان کے حق میں آواز تک نہیں اُٹھائی۔ ترکی کے اردگان ہزاروں ٹن امدادی سامان کے ساتھ بنگلہ دیش پہنچ گئے۔ صاحبوان دہشت گردوں کے ساتھ مسلمان نام نہیں ہے اس لیے اس کے خلاف مغرب، مغربی فنڈڈ این جی،ہیومن رائٹس کی تنظیمیں اور اقوام متحد ہ خاموش ہے۔ ترکی نے بنگلہ دیش حکومت سے کہا ہے کہ میانمار کے سارے مہاجرین کے اخراجات وہ ادا کرے گا۔ان حالات میں سینیٹر اور امیر جماعت اسلامی سراج الحق نے پورے پاکستان میں دنیا کے مسلمانوں کی آواز میں آواز ملانے کی جماعت اسلامی کی مستقل پالیسی کے تحت پورے ملک میں میانمار کے مسلمانوں کے ساتھ اظہار یکجہتی کے لیے ریلیوں کی کال دی۔ جس پرشہر شہر اور گلی گلی روہنگیا کے مسلمانوں کی حمایت میں پاکستانی عوام نے احتجاج کیا۔ اسی کال کے تحت اسلام آباد کی ریلی کا انتظام کیاگیا ہے جس میں سراج الحق شریک ہوئے۔ ریلی کاپروگرام کا باقاعدہ آغاز نماز جمعہ کے بعد آپارہ چوک پر ہوا۔اسٹیج سیکر ٹری کے فرائض جماعت اسلامی اسلام آباد کے نائب امیر اور کاروباری تنظیم کے صدر جناب کاشف عباسی اور اسلام آباد جماعت اسلامی کے سیکر ٹیری جناب قاری امیر عثمان نے مشترکا طور پر اداکیے۔ اسلام آباد کی مختلف مساجد سے نمازی جلوس کی شکل میں جوق در جوق اس پروگرام میں شریک ہوتے گئے اور پھر جلوس کی شکل بنتی گئی جو آہستہ آہستہ برما کے سفارت خانے کے طرف بڑھتا گیا۔ جگہ جگہ جلوس رُکتا رہا اور مقررین تقریریں کرتے رہے ۔ پرجوش شریکِ جلوس ان کی تقریروں کے درمیان نعرے لگاتے رہے ۔ پروگرام شروع ہونے سے پہلے اور پروگرام اور تقریر کے دوران سائونڈ سسٹم سے روہنگیا کے مظلوم مسلمانوں کے لیے دُکھیاگیت بھی سنائے جاتے رہے۔ انتظامیہ نے پہلے سے شہر میں چھ ہزار پولیس لگا دی تھی۔ جگہ جگہ رکاوٹیں کھڑی کر کے عوام کو اس ریلی میں شامل ہونے سے روکا جا رہا تھا۔ ارد گرد کی سڑکوں اور آبپارہ کی سڑک کو دونوں طرف سے بند کر دیا گیا تھا۔ کسی قسم کی گاڑی کو مسجد شہدا کے گیٹ تک نہیں جانے دیا جارہا تھا۔ نمازیوں کو مسجد شہدا میں جانے کے لیے دشواری ہو رہی تھی۔ راقم ایک آزاد مشن صحافی ہونے کے ناتے اس ریلی کی رپورٹنگ کے لیے اس میں شریک ہوا۔ میں کئی سالوں سے معذور ہوں۔ خود میری گاڑی جسے میرا بیٹا چلا رہا تھا کو آبپارہ چوک پر پولیس نے روک لیا۔ میںایک فرلانگ بھی پیدل نہیں چل سکتا۔ میرے بیٹے نے پولیس والوں کو کہا کہ میں مسجد کے گیٹ پر والد کو اُتار کر واپس آ جاتا ہوں۔مگر پولیس والوںنے ایک نہ مانی اور مجھے بھی چوک سے مسجد تک سہارہ لے کر جانا پڑا۔ جب ریلی شروع ہوئی تو نہتے شرکا ہاتھوں میں اپنی اپنی پارٹیوں کے جھنڈے اور برما کی حکمران سوچی کی تصویر والے پلے کارڈ اور احتجاجی بینرز لیے برما کے سفارت خانے کی طرف بڑھتے گئے۔پولیس والے جنگی لباس پہنے جلوس کے ساتھ ساتھ چلتے گئے۔آگے سرینا چوک اور ریڈ زون کے قریب کنٹینرز اور خار دار تاریںلگا کر ریلی کا راستہ روک دیا گیا۔ کنٹینرز پر لیوی کے نوجوان بٹھا دیے گئے۔ کنٹینرز کے سامنے سراج الحق سینیٹر اورامیر جماعت اسلامی پاکستان نے اپنے خطاب میں کہا دنیا کے مسلمان یک جان ہیں ۔مسلمانوں کے خلاف جہاں بھی ظلم ہو گا ہم آواز اُٹھائیں گے۔ انہوں نے حکومت سے کہا کہ میانمار سے سفارتی تعلقات ختم کر کے اس کے سفیر کو پاکستان بدر کر کے اپنے سفیر کو واپس بلایا جائے۔ میانمار اور پاکستان نے اقوام متحدہ کے عالمی چارٹر پر دستخط کیے ہوئے ہیں کہ اپنی اپنی اقلیتوں کا تحفظ کریں  گے۔ میانمار نے اس کی خلاف ورزی کی ہے۔ روہنگیا کے مسلمانوں نے بدھ مذہب کے خلاف کوئی بات نہیں کی۔اب کہا ں ہیں یہ این جی اوز کہ آٹھویں صدی سے آباد روہنگیا کے مسلمانوں کی شہریت ختم کر دی گئی اور یہ آواز نہیں اُٹھا رہیں۔ سراج الحق صاحب نے اپنے صدارتی خطاب میں کہا کہ میانمار کے خلاف عالمی عدالت انصاف میں مسلمانوں کی نسل کشی کے خلاف مقدمہ قائم کیا جائے۔ انہوں نے اسلامی دنیا کے حکمرانوں سے کہاکہ میانمار کے مسلمانوں کے حق میں آواز اُٹھائیںان کی مدد کریں۔ انہوں نے کہا حکومت ہمارے برما کے سفارتخانے پر احتجاج کرنے سے ڈرتی ہے۔ اصل میںاس کو امریکا کا ڈر ہے۔ اگر مطالبات منظور نہ کیے گئے تو میں جماعت اسلامی کے کارکنوں اور عوام کو اسلام آباد کی طرف مارچ کا کہوں گا۔ پھر حکمرانوں کی حکمرانی بچے گی نہ ان کے امریکی غلامی ۔ہمارا کام اپنے ملک کی املاک کو نقصان پہنچانا نہیں بلکہ میانمار کے مسلمانوں کے خلاف آواز بلند کر کے دنیا کے ضمیرکو جھنجھوڑنا ہے۔مغرب سے چند منٹ پہلے یہ پرامن ریلی اس دعا پر ختم ہوئی کی روہنگیا کے مسلمانوں کی اللہ تعالیٰ مدد کرے آمین۔                                                                         

Read more

11 September 2017

بچے غیر سیاسی ہوتے ہیں۔۔۔ضمیر نفیس

سابق وزیر داخلہ اور مسلم لیگ (ن) کے اہم رہنما چوہدری نثار علی کے ایک انٹرویو  پر ان دنوں بعض حلقوں میں بڑی بحث ہو رہی ہے مذکورہ انٹرویو میں انہوں نے کہا کہ مریم نواز اور بے نظیر بھٹو کا کوئی مقابلہ نہیں' مریم نواز ابھی بچی ہیں اور بچے غیر سیاسی ہوتے ہیں میں نے کبھی ان کو اپنا لیڈر نہیں مانا ابھی تو انہوں نے سیاسی سفر کا آغاز کیا ہے انہیں لیڈر بننے میں وقت لگے گا' ذوالفقار علی بھٹو کی بیٹی بے نظیر بھٹو ایک دم لیڈر نہیں بنیں انہوں نے دس سال تک نشیب و فراز اور انتہائی مصائب کے ساتھ سیاسی جدوجہد کے عمل کو جاری رکھا اس دوران انہوں نے قید و بند کی صعوبتیں اور جلاوطنی بھی کاٹی تب کہیں جا کر قوم نے انہیں اپنا لیڈر مانا مریم نواز کو اپنے آپ کو لیڈر ثابت کرنے کے لئے بہت وقت چاہیے نواز شریف کو رخصتی میں فوج کا کردار نہیں ہے اگر انہوں نے محاذ آرائی کی تو اس سے اپنی پوزیشن کمزور کریںگے سپریم کورٹ اور فوج سے محاذ آرائی کا راستہ غلط ہے فوج سے ہماری کوئی لڑائی نہیں محاذ آرائی کا مشورہ دینے والے لوگ پارٹی کے اندر اقلیت میں ہیں۔چوہدری نثار علی نے محولہ انٹرویو میں کوئی ایک بات بھی غلط نہیں کی  میں اس میں اضافہ کرتے ہوئے بلاول کو بھی شامل کرتا ہوں بلاول کی بھی محض یہی خصوصیت ہے کہ وہ بے نظیر  کا بیٹا ہے لیکن وہ آصف زرداری کے بھی بیٹے ہیں اگر بے نظیر کا بیٹا ہونا ان کی خصوصیت اور امتیاز ہے تو آصف زرداری کا بیٹا ہونا ان کے لئے منفی پوائنٹ ہے والدین کی اچھی یا بری شہرت کے بچوں پر بھی اثرات مرتب ہوتے ہیں سیاست کے میدان میں عملی جدوجہد بلاول نے بھی نہیں کی اس اعتبار سے مریم نواز اور بلاول دونوں یکساں ہیں دونوں اپنے اپنے گھرانوں اور ان کے اقتدار کا فائدہ اٹھا رہے ہیں اگر پیپلزپارٹی اور مسلم لیگ (ن) دونوں اقتدار میں نہ ہوتیں پھر دیکھتے لیدری کیسے چلتی' چوہدری نثار علی نے درست کہا کہ بچے غیر سیاسی ہوتے ہیں انہیں ایک لمہے یا چند دنوں میں سیاسی اور پھر لیڈر نہیں بنایا جاسکتا اس کام میں وقت لگتا ہے سرکاری میڈیا کوریج کرے دوسروں کے لکھے ہوئے سکرپٹ سامنے ہوں اور خوشامدیوں کا ہجوم ہو جو تقریر کے ایک ایک لفظ پر سر دھنتے اور تعریف کرتے ہوں تو ایسے میں انسان کے اندر اپنے آپ کو لیڈر سمجھنے کی خوش فہمی پیدا ہو جاتی ہے  میں یہ تماشا دیکھتا ہوں کہ جن لوگوں کا چالیس چالیس سال کا سیاسی تجربہ ہے جو تعلیم یافتہ اور تجربہ کار ہیں وہ بھی اپنے سفید سروں کے ساتھ راونڈ ٹیبل  بیٹھے ہیں اور بلاول اپنے معتمد کی رومن میں لکھی ہوئی مختصر تقریر ان کے سامنے پڑھ کر انہیں عوام سے رابطے کی نصیحت کرتے ہیں۔ یہ  پرانے سیاستدان بھی موروثنی سیاست میں پھنسے ہوئے ہیں ٹکٹ کی مجبوری ہے اپنے بچوں سے بھی  چھوٹے بلاول کو قائد کہہ کر خوشامد نہ کریں تو ان کا سیاسی مستقبل تاریک ہو جائے گا' اگر ان سب سے حلف لے کر ان کے دل کا حال پوچھا جائے تو ہر ایک یہ تسلیم کرے گا کہ مجبوری کے عالم میں وہ اس بچے کو قائد کہہ رہے ہیں جو ان کے مقابلے میں سیاست کا علم اور تجربہ زیرو رکھتا ہے گویا قائد ہونے کے لئے سیاست کا تجربہ نہیں کسی قائد کی اولاد ہونا شرط اول ہے عوام سے تعارف بھی ضروری نہیں یہ بعد میں ہوتا رہے گا یہ سب خوشامدیوں اور ملازموں کے ذمے ہے چوہدری نثار علی نے درست کہا کہ مریم نواز میرے قائد کی بیٹی ہے قائد نہیں ابھی تو ان کے سیاسی سفر کا آغاز ہے منزل ابھی بہت دور ہے' عوام  کا لیڈر ہونا بہت مشکل  ہے البتہ اس کے لئے وقت اور محنت چاہیے جبکہ والد کا لیڈر ہونا بھی ضروری نہیں والدین کے زورپر جو لیڈر بنتے ہیں عوام کے لئے انہیں قبول کرنا ضروری نہیں عوام آزاد ہیں پارٹی کارکنوں کی طرح مجبور نہیں ہوتے ان کا مسئلہ خوشامد بھی نہیں ہوتا عوام جنہیں لیڈر بناتے ہیں وہ پھانسی پانے کے  بعد بھی زندہ رہتے ہیں نہ صرف تاریخ میں بلکہ عوام کے دلوں میں !!



Read more

11 September 2017

امریکہ اور افغانستان الزام تراشیوں کو چھوڑ کر زمینی حقائق قبول کریں

آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ کی صدارت میں منعقدہ کور کمانڈرز کانفرنس میں ملک کی داخلی اور خارجی صورتحال کا جائزہ لیا گیا اور آپریشن  ردالفساد کے نتائج پر تبادلہ خیال کیا گیا کور کمانڈرز نے کنٹرول لائن  کی صورتحال پر بھی غور کیا اور  مشرقی و مغربی سرحدوں پر آپریشن تیاریوں پر مکمل اطمینان کا  اظہار  کیا کانفرنس میں عسکری قیادت نے اس عزم کا اظہار کیا کہ ملک کو دہشت گردی سے مکمل نجات دلانے کے لئے آپریشنز جاری رہیں گے ہمارے نزدیک کوئی اچھا برا دہشت گرد نہیں سب کے خلاف بلاامتیاز کارروائی جاری ہے خطے کے حوالے سے نئی امریکی پالیسی میں پاکستان کی قربانیوں کو نظرانداز کیا گیا اپنے دفاع اور سلامتی کو یقینی بنانے کے لئے تمام اقدامات اٹھائیں گے۔ عسکری قیادت کا کہنا تھا کہ الزام تراشی مسائل کا حل نہیں زمینی حقائق کو سمجھا جائے افغانستان میں امن کے لئے پاکستان نے بنیادی کردار ادا کیا ہے افغانستان کی لڑائی کو پاکستان کے اندر توسیع دینے کی کوششوں کو ناکام بنایا  جائے گا۔ کور کمانڈروں کی کانفرنس کا پیغام بہت واضح ہے متعلقہ ممالک کو اس کا مفہوم سمجھنے میں کوئی دقت نہیں ہونی چاہیے' دہشت گردی افغانستان اور پاکستان کا مشترکہ مسئلہ ہے دونوں کو اپنی سرحدوں کو کنٹرول کرکے دہشت گردوں کا خاتمہ کرنا ہے پاکستان نے بڑی حد تک اپنے حصے کا کردار ادا کیا ہے اور دہشت گردوں کے انفراسٹرکچر اور مضبوط ٹھکانوں کو ختم کیا ہے اب اس کی سیکورٹی فورسز بھاگے ہوئے اور بچے کچھے دہشت گردوں کو ملک کے مختلف کونوں  کھدروں سے نکال کر کیفر کردار کو پہنچا رہی ہیں جبکہ اس کے برعکس افغانستان کی حکومت اس معاملے میں کسی قسم کی موثر کارکردگی نہیں دکھا سکی۔ امریکہ اور نیٹو کی فورسز بھی سولہ برسوں تک  جدید ترین اسلحہ کے باوجود افغانستان کا امن بحال کرنے میں کامیاب نہ ہوسکیں چنانچہ امریکہ اور افغانستان دونوں نے اپنی ناکامیوں کو چھپانے کے لئے پاکستان پر الزام تراشی شروع کر دی کہ اس کی سرزمین سے دہشت گرد آکر افغانستان میں کارروائی کر رہے ہیں اگر ایک لمحہ کے لئے اس جواز کو درست تسلیم کرلیا جائے تو بھی افغان حکومت کی یہ ذمہ داری ہے کہ وہ  بارڈر کو سیل کرکے دہشت گردی کے خلاف کارروائی کرے الزام تراشیوں کے بجائے امریکہ اور افغانستان کو اپنی کارکردگی کا جائزہ لینا چاہیے الزام تراشیوں سے مسئلہ حل نہیں ہوسکتا افغانستان کے بہت سے علاقوں پر طالبان نے کنٹرول حاصل کرلیا ہے طاقت کے استعمال کا تجربہ  ناکام ہوچکا ہے مذاکرات اور مکالمے کے ذریعے اس تباہ حال ملک میں امن بحال کیا جاسکتا ہے' خطے کے تمام ممالک طالبان کے ساتھ مذاکرات کے حامی  ہیں امریکہ اور افغانستان کو بھی الزام تراشی کی سیاست چھوڑ کر زمینی حقائق کو قبول کرنا چاہیے۔



Read more

11 September 2017

سول ایٹمی تعاون کے معاملے میں چین کی زبردست معاونت

چشمہ سی فور پاور پلانٹ کے افتتاح کے موقع پر منعقدہ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے کہا کہ وطن سے لوڈشیڈنگ کا خاتمہ ان کی حکومت کی اولین ترجیح ہے دس ہزار میگاواٹ سے زائد بجلی کے منصوبے آئندہ سال جون سے پہلے مکمل ہو جائیں گے' بجلی کی صورتحال اب کافی بہتر ہے امید ہے کہ ہم نومبر2017ء کے بعد ملک سے لوڈشیڈنگ کا خاتمہ کرنے کے قابل ہوں گے انہوں نے کہا کہ جوہری توانائی کا منصوبہ 2020ء تک پاکستان اٹامک انرجی کمیشن کو دئیے جانے والے8800میگاواٹ کے ہدف کے حصول کی جانب اہم قدم ثابت ہوگا ہماری حکومت نے چین کے ساتھ مل کر سی پیک کے تحت بہت سے بڑے منصوبے شروع کئے ہیں جن کے ثمرات پاکستان کے عوام تک پہنچنا شروع ہوگئے ہیں ملک کی ترقی کی شرح 5فیصد سے تجاوز کر گئی ہے جو اس سال 6فیصد کے لگ بھگ ہوگی وزیراعظم نے کہا کہ 28دسمبر2016ء میںچشمہ یونٹ تھری کے باقاعدہ آغاز کے صرف آٹھ ماہ بعد ملک کے پانچویں ایٹمی بجلی گھر چشمہ یونٹ فور کا افتتاح باعث افتخار ہے ماضی کی طرف دیکھتے ہوئے مجھے اس بات کی خوشی ہے کہ جب چشمہ یونٹ ون کی تعمیر کا معاہدہ ہوا تھا تو اس وقت بھی ملک میں محمد نواز شریف کی حکومت تھی اور  اسی معاہدے نے دونوں ممالک کے درمیان ایٹمی توانائی کے شعبے میں تعاون کی بنیاد رکھی چشمہ میں چلنے والے تینوں یونٹ ملک میں بہترین کارکردگی کے حامل ہیں اور اس وقت ملک کو 900میگاواٹ سے زائد بجلی ارزاں نرخ پر فراہم کر رہے ہیں مجھے اس بات کی بھی خوشی ہے کہ دو اضافی منصوبے کے 2اور کے 3بھی تیزی سے تکمیل کی جانب گامزن ہیں اور یہ وقت سے پہلے مکمل ہو کر ملک کو روشن بھی کریںگے اور ماحول میں آلودگی کو کم کرنے  میں بھی اپنا کردار اا کریں گے وزیراعظم نے کہا کہ یہ امر پاکستان کے لئے باعث فخر ہے کہ بین الاقوامی امداد کے بغیر چار دہائیوں سے زائد عرصے پر محیط کمپنیوں سے محفوظ اور مسلسل پیداوار حاصل ہو رہی ہے انہوں نے کہا کہ حکومت سی پیک منصوبوں میں نجی شعبے کی زیادہ سے زیادہ شراکت چاہتی ہے چین کی قیادت نے بھی وعدہ کیا ہے کہ وہ سی پیک کے ذریعے پاکستان کی معیشت کو مضبوط کرنا چاہتے ہیں اور صنعتی شعبہ میں ہماری مدد کے خواہاں ہیں۔چشمہ میں یونٹ فور کا افتتاح ایک اہم پیش رفت ہے چشمہ میں پہلے ایٹمی پاور پلانٹ کی تنصیب کے موقع پر چین نے زبردست معاونت کی چین کے انجینئروں نے نہ  صرف خود محنت کی بلکہ انہوں نے اٹامک انرجی کمیشن کے انجینئروں کی تربیت بھی کی جس کے بعد پاکستان کے انجینئر اور متعلقہ افراد خود تمام امور سرانجام دینے لگے۔ اب بھی مخصوص حالات میں پاکستان کے متعلقہ حکام چینی ماہرین کی صلاحیتوں سے استفادہ کرتے ہیں چشمہ کے تینوں یونٹوں سے اس وقت تو سو میگاواٹ سے زائد بجلی حاصل ہو رہی ہے یونٹ فورکی تکمیل کے بعد یہ پیداوار 1250میگاواٹ تک پہنچ جائے گی پاکستان کو صنعتی شعبہ کے لئے اس وقت سستی بجلی کی ضرورت ہے تاکہ کم لاگت کے باعث ارزاں پیداوار حاصل کرے اور عالمی منڈیوں کا مقابلہ آسکے ایٹمی بجلی گھر اس معاملے میں اہم کردار ادا کر سکتے ہیں ان سے حاصل کردہ بجلی نہ صرف سستی ہے بلکہ اس کے یونٹ ماحول کو بھی آلودہ نہیں کرتے حکومت نے اٹامک انرجی کمیشن کو 2020ء تک 8800میگاواٹ بجلی کی پیداوار کا ہدف  دے رکھا ہے اس وقت چشمہ کے علاوہ کینپ سے بھی جوہری توانائی کے ذریعے بجلی حاصل کی جارہی ہے۔ ہمیں ایٹمی بجلی کے حصول کے لئے مزید بجٹ مختص کرنا ہوگا اور مزید منصوبے شروع کرنے ہوں گے۔ امریکہ ماضی میں پاکستان کو اپنا زبردست حلیف قرار دیتا رہا۔ پاکستان کو اپنا سٹریٹجک پارٹز کہتا رہا سرد جنگ کے  خاتمہ کے بعد بھارت اور اس کی گرمجوشی بڑھی اور بھارت کی توانائی کی ضروریات پوری کرنے کے لئے اس نے اس کے ساتھ سول ایٹمی تعاون کا معاہدہ کیا لیکن جب پاکستان نے اس خواہش کا اظہار کیا کہ اسے بھی توانائی کے بحران کا سامنا ہے اس کے ساتھ بھی سول ایٹمی تعاون معاہدہ کیا جائے تو امریکہ نے مزکورہ معاہدے سے صاف انکار کر دیا تاہم یہ کہا کہ وہ دیگر ذرائع سے اس کی توانائی کی ضروریات پوری کرے گا اس صورتحال میں چین نے زبردست تعاون کیا اور ایٹمی توانائی کو پرامن مقاصد کے لئے استعمال کرنے کے معاملے میں پاکستان کی بہت مدد کی' چشمہ کے تمام تر یونٹ چین کے تعاون اور پاکستان کو معاشی طور پر مضبوط  دیکھنے کی خواہش کے آئینہ دار ہیں۔


Read more

عمران خان کی لندن میں شادی کی تقریب میں شرکت

چیئرمین تحریک انصاف عمران خان نے لندن میں معروف بزنس مین اور سماجی شخصیت انیل مسرت کی بیٹی کی شادی میں شرکت کی ۔شادی کی تقریب میں پاکستانی سیاستدانوں کے علاوہ، بالی وڈ اداکاروں اور لندن کے میئر صادق خان نے بھی شرکت کی۔انیل مسرت کی بیٹی کی شادی میں چیرمین تحریک انصاف عمران خان، شاہ محمود قریشی اور ڈاکٹر بابر اعوان بھی شریک ہوئے۔عوامی مسلم لیگ کے سربراہ شیخ رشید احمد، پیپلز پارٹی کے رہنما مخدوم احمد محمود اور  وکیل احمد رضا قصوری سمیت دیگر سیاسی شخصیات نے بھی شرکت کی۔ سابق وزیراعظم پاکستان شوکت عزیز بھی تقریب میں مدعو تھے جب کہ بھارتی اداکار انیل کپور اور سنیل شیٹی بھی شادی کی تقریب کا حصہ تھے۔

Read more

کوٹلی میں جیپ برساتی نالے میں بہنے سے ایک ہی خاندان کے 8افراد جاں بحق

آزاد کشمیر میں نکیال سیکٹر کے علاقے متھرانی دھموئی میں مسافر جیپ برساتی نالے میں بہہ گئی جس کے باعث ایک ہی خاندان کے 8 افراد جاں بحق ہو گئے۔بے نظیر انکم اسپورٹ پروگرام آزاد کشمیر کے ڈائریکٹر چوہدری محمد اسحاق اپنی فیملی کے ہمراہ جیپ میں اپنی منزل کی جانب رواں دواں تھے کہ کوٹلی کے علاقے متھرانی دھموئی کے قریب ان کی جیپ حادثے کا شکار ہو کر مسافر نالے میں جا گری۔ نالے میں بہا تیز ہونے کے باعث جیپ پانی میں بہہ گئی جس کے نتیجے میں ایک ہی خاندان کے 8 افراد جاں بحق ہوگئے۔مقامی پولیس کے مطابق حادثے کی اطلاع ملتے ہی ریسکیو ٹیموں کے اہلکار اور مقامی افراد نے بہہ جانے والے افراد کو بچانے کی کوشش کی تاہم تمام افراد پانی کی تیز موجوں کی نذر ہو گئے اور ان کی لاشیں برساتی نالے سے نکال لی گئی ہیں۔


Read more

کراچی آنے والی غیرملکی حج پرواز کا اے سی خراب، مسافروں کی حالت غیر

غیر ملکی ایئر لائن نے سنگین غفلت کا مظاہرہ کرتے ہوئے مدینے سے آنے والی پرواز میں سوار حاجیوں کی جان خطرے میں ڈال دی۔غیرملکی ایئرلائن نے خصوصی حج پرواز میں سوار مسافروں کی جان خطرے میں ڈال دی۔ مدینے سے کراچی آنے والی پرواز ایس وی 706 روانگی میں پونے تین گھنٹے تاخیرکا شکار ہوئی تاہم جب مسافر جہاز میں سوار ہوئے تو پتہ چلا کہ اس کا اے سی سسٹم بھی کام نہیں کررہا تھا۔شکایت کرنے پر عملے نے مسافروں سے کہا کہ ٹیک آف کے بعد سسٹم کام کرنے لگے گا، تاہم سفر کے دوران بھی اے سی ٹھیک نہ ہوسکا۔ مسافروں نے اس پر احتجاج کیا تاہم عملے نے ان کی ایک نہ سنی۔ شدید حبس اور دم گھٹنے کی وجہ سے بیشتر مسافروں کی حالت غیر ہوگئی جس کے باوجود عملے نے طیارے کا رخ نہ تو واپس مدینے کی طرف موڑا اور نہ کسی نزدیکی ایئرپورٹ پر اتارا بلکہ سفر جاری رکھا۔


Read more

ایل اوسی پر بھارتی جارحیت کا بھرپورجواب دیا جائے، کورکمانڈرراولپنڈی

آئی ایس پی آر کے مطابق کورکمانڈر راولپنڈی جنرل ندیم رضا کا کہنا ہے کہ بھارت کی جانب سے کنٹرول لائن کی کسی بھی خلاف ورزی کا مثر اور بھرپور جواب دیا جائے۔پاک فوج کے شعبہ تعلقات عامہ(آئی ایس پی آر)کے مطابق کورکمانڈر راولپنڈی لیفٹیننٹ جنرل ندیم رضا نے کنٹرول لائن پر بٹل اور دوراندی سیکٹرز کا دورہ کیا اوروہاں تعینات دستوں سے ملاقات کی اور ان کے مورال کی تعریف کی۔اس موقع پر لیفٹیننٹ جنرل ندیم رضا کا کہنا تھا کہ پاک فوج کے جوان بھارت کی جانب سے سیز فائر کی خلاف ورزیوں کا بھرپور جواب دے رہے ہیں اور اگر دوبارہ بھارت کی جانب سے کنٹرول پر کوئی جارحیت ہوئی تو اس کا مثر اور بھرپور جواب دیا جائے گا۔

Read more

میانمار سے سفارتی تعلقات منقطع اور سفیر کو ملک بدر کیا جائے، جماعت اسلامی

جماعت اسلامی نے روہنگیا مسلمانوں پر مظالم کے خلاف احتجاج کرتے ہوئے میانمار کے سفیر کو ملک بدر اور سفارتی تعلقات منقطع کرنے کا مطالبہ کیا۔جماعت اسلامی نے روہنگیا مسلمانوں کے قتل عام کے خلاف بنوں پریس کلب کے سامنے احتجاجی مظاہرہ کیا۔ شرکا نے میانمار حکومت کیخلاف نعرے لگائے اور مسلمانوں پر مظالم بند کرنے کا مطالبہ کیا۔ مظاہرین نے کہا کہ پاکستان کی کمزور خارجہ پالیسی کی وجہ سے برما اور کشمیر کے مسلمانوں پر مظالم ڈھائے جارہے ہیں، بے حس حکمرانوں نے امریکا کے خوف کے باعث میانمار کے سفارتحانے کے ارد گرد رکاوٹیں کھڑی کردیں۔مظاہرین نے حکومت سے میانمار کے سفیر کو ملک بدر اور سفارتی تعلقات ختم کرنے کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ میانمار میں مسلمانوں پر بدترین ظلم کی تاریخ میں مثال نہیں ملتی، طاغوتی قوتیں چن چن کر مسلمانوں کی نسل کشی کر رہے ہیں اور اقوام متحدہ خاموش  تماشائی بنی ہوئی ہے۔

Read more

ڈاکٹرعاصم حسین علاج کیلئے لندن روانہ

پیپلزپارٹی کے رہنما ڈاکٹرعاصم حسین علاج کی غرض سے لندن روانہ ہوگئے۔اربوں روپے کی کرپشن اوردہشت گردوں کی سہولت کاری کے مقدمات میں نامزد ڈاکٹرعاصم حسین جناح انٹرنیشنل ایئرپورٹ سے پرواز ای کے 601 سے علاج کے لیے لندن روانہ ہوگئے ہیں۔ ڈاکٹرعاصم کا نام سپریم کورٹ کے حکم کے بعد ای سی ایل سے نکال دیا گیا تھا۔ڈاکٹرعاصم کے خلاف کرپشن اور دہشتگردوں کے علاج کے کیسز زیرِ سماعت ہیں تاہم شیڈول کے مطابق وہ 7 اکتوبر کو وطن واپس لوٹیں گے۔واضح رہے کہ ڈاکٹرعاصم کے خلاف اربوں روپے کی کرپشن اوردہشت گردوں کی سہولت کاری کے الزام ہیں تاہم اس وقت وہ ضمانت پرہیں۔

Read more

گزشتہ شمارے

<< < September 2017 > >>
Sun Mon Tue Wed Thu Fri Sat
          1 2
3 4 5 6 7 8 9
10 11 12 13 14 15 16
17 18 19 20 21 23
24 25 26 27 28 29 30