کلثوم نواز کاغذات نامزدگی کیس :لاہور ہائی کورٹ کا تین رکنی بنچ ٹوٹ گیا

بیگم کلثوم نوازکے حلقہ این اے 120 کے ضمنی الیکشن میں کاغذات نامزدگی کی منظوری کیخلاف درخواست پرسماعت کرنیوالاہور ہائیکورٹ کا3رکنی بنچ دوبارہ تحلیل ہوگیا اوربنچ کے سربراہ جسٹس فرخ عرفان خان نے سماعت سے معذرت کرلی ہے بیگم کلثوم نواز کے کاغذات نامزدگی کی منظوری کے خلاف دائر درخواست کی سماعت لاہور ہائیکورٹ کے جسٹس محمد فرخ عرفان خان ،جسٹس کاظم رضا شمسی اور جسٹس علی اکبر قریشی پر مشتمل تین رکنی بنچ کے روبرو دوبارہ سماعت کیلئے مقرر کی گئی تھی سماعت شروع ہوتے ہی بنچ کے سربراہ جسٹس محمد فرخ عرفان خان کی جانب سے ذاتی وجوہات کی بناء پر کیس کی سماعت سے انکار کے بعد بنچ ٹوٹ گیا ، فل بنچ نے کیس مزید سماعت کے لئے چیف جسٹس کو واپس بھجوا دیا پیپلز پارٹی کے امیدوار فیصل میر کی جانب سے بیگم کلثوم نواز کے کاغذات نامزدگی کو چیلنج کیا گیا ہے درخواست میں موقف اختیار کیا گیا ہے کہ بیگم کلثوم نواز نے کاغذات نامزدگی میں اپنی آمدن اور اثاثے ظاہر نہیں کئے بیگم کلثوم نواز نے خود کو نوازشریف کی زیر کفالت ظاہر کیا مگر وہ کئی کمپنیوں میں شئیر ہولڈر ہیں،بیگم کلثوم نواز نے زرعی انکم ٹیکس کی ادائیگی نہیں کی اقامہ ظاہر کیا مگر تنخواہ کی رسید اور اس سے ہونے والی بچت کو ظاہر نہیں کیا انہوں نے مری کی رہائش گاہ میں موجود فرنیچر اور دیگر گھریلو اشیاء کا کوئی ذکر نہیں کیا،بیگم کلثوم نواز نے کاغذات نامزدگی میں حقائق چھپائے سندھ میں ان کے خلاف بغاوت کا مقدمہ درج ہے جس میں بیگم کلثوم نوازمفرور ہیں درخواست میں استدعا کی گئی کہ ریٹرننگ افسر اور الیکشن اپیلٹ ٹربینول کے فیصلے کو کالعدم قرار دیا جائے