این آئی سی ایل کرپشن، سپریم کورٹ کا احتساب عدالت کو 2 ماہ میں فیصلے کا حکم

اسلام آباد:  عدالت عظمی نے احتساب عدالت کو این آئی سی ایل کرپشن کیس کا 2 ماہ میں فیصلہ کرنے کاحکم دیاہے۔نیب پراسیکیوٹرنے چیف جسٹس کے استفسارپربتایاکہ ملزم محسن حبیب وڑائچ بیرون ملک مفرور ہے۔چیف جسٹس نے برہمی کا اظہارکرتے ہوئے کہا کہ جب نام ای سی ایل میں تھا تو وہ ملک سے کیسے بھاگا ؟اطلاع ہے کہ وہ لندن میں ہے اور افغانستان کی سرحدسے فرارہوکرلندن پہنچا۔نیب پراسیکیوٹرکا کہنا تھا ملزم کو ملک لانے کے لیے اقدامات کیے جارہے ہیں،انھیںبہت جلدپکڑا جائے گا،عدالت عظمی نے سپریم کورٹ بارایسوسی ایشن کی ہائوسنگ سوسائٹی کے لیے زمین کے معاملے میں پیشرفت نہ ہونے پر ڈائریکٹر جنرل فیڈرل گورنمنٹ ایمپلائز ہائوسنگ فائونڈیشن کو ذاتی حیثیت میں طلب کرلیا۔عدالت نے ڈی جی ہائوسنگ فائونڈیشن کو جمعے کوپیش ہونے کی ہدایت کرتے ہوئے آبزرویشن دی کہ اربوں روپے لینے کے باجود زمین کا قبضہ نہیں دیا جا رہا،چیف جسٹس نے کہا کہ ڈی جی ہائوسنگ فائونڈیشن سپریم کورٹ بارایسوسی ایشن کی ہائوسنگ سوسائٹی کے خلاف سازشیںکرتا ہے، تین سال سے یہ بندہ اس سیٹ پر بیٹھا ہوا ہے لیکن کسی میں جرات نہیںکہ اس کو عہدے سے ہٹائے۔