0

کورونا وائرس ہوا کے ذریعے بھی پھیلتا ہے، سیکڑوں ماہرین کا دعوی


میری لینڈ، امریکا: کورونا وائرس کے پھیلا کی ضمن میں سینکڑوں ممتاز ماہرین نے ایک نیا دعوی کیا ہے جس میں کہا گیا ہے کہ چھینکنے، کھانسی اور چھونے کے علاوہ بھی کورونا وائرس ہوا میں موجود باریک ذرات پر سفر کرتے ہوئے ہوا میں پھیل سکتے ہیں اور دوسروں کو متاثر بھی کرسکتے ہیں۔یہ بات طے ہے کہ انسانوں کے منہ اور ناک سے خارج ہونے والے مائعات کے باریک قطروں (ڈراپلٹس) کے اندر وائرس بند ہوکر کئی فٹ تک سفر کرکے دوسرے انسان کو متاثر کرسکتا ہے۔ لیکن یونیورسٹی آف میری لینڈ کے پروفیسر ڈونلڈ ملٹن اور دیگر عالمی ماہرین کا اصرار ہے کہ وائرس نمی والے قطروں کے ذریعے کچھ بلندی پر جاکر ہوا میں کچھ دیر گھومتے رہتے ہیں ۔ یہی وجہ ہے کہ ہم اسے اڑ کر لگنے والی یا ہوا سے پھیلنے والی وبا کہہ سکتے ہیں۔اس ضمن میں 32 ممالک کے 239 سائنسدانوں نے عالمی ادارہ برائے صحت کو ایک کھلا خط بھی تحریر کیا ہے جس کی تفصیل ایک سائنسی جرنل میں اسی ہفتے شائع کی جائے گی۔ لیکن اس ضمن میں عالمی ادارہ برائے صحت میں وبائی امراض کی ماہر ڈاکٹر بینی ڈیٹا الگرانزی نے کہا ہے کہ ہوا میں وائرس کے پھیلنے کا دعوی ان کے لیے قابلِ قبول نہیں۔

کیٹاگری میں : صحت

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں