0

120 نئی احتساب عدالتوں کے قیام میں مالی مسائل کا سامنا ہے، وزارت قانون

اسلام آباد: وفاقی وزارت قانون نے سپریم کورٹ کو اپنے جواب میں کہا ہے کہ 120 نئی احتساب عدالتوں کے قیام میں مالی مسائل کا سامنا ہے۔وزارت قانون نے 120 احتساب عدالتوں کے قیام سے متعلق اپنا جواب سپریم کورٹ میں جمع کرادیا ہے۔ جس میں کہا گیا ہے کہ نئی عدالتوں کے قیام میں مالی مسائل کا سامنا ہے، عدالتوں کے قیام کے بعد 2 ارب 86 کروڑ روپے کے بجٹ کی ضرورت ہوگی جس کے لئے مشاورت کا عمل شروع کر دیا ہے لیکن 120 نشستوں کی وزارت خزانہ اور اسٹبلیشمنٹ ڈویژن سے اجازت لینا ہوگی، بجٹ بھی وزارت خزانہ سے منظور کرنا ہوگا۔رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ ایک احتساب عدالت کے لیے جج سمیت 15 افسران و ملازمین درکار ہوں گے، اس طرح 120 نئی عدالتوں کے لئے 120 جج سمیت 1800 افسران و ملازمین درکار ہوں گے۔ احتساب عدالت کے جج کی ماہانہ تنخواہ 4 لاکھ 15 ہزار 894 روپے بشمول تمام الاونسز ہے،120 احتساب عدالتوں پر الاونسز کی مد میں 70 کروڑ، ریگولر الاونسز کی مد میں 65، جوڈیشل الانس اور اسپیشل جوڈیشل الاونس کی مد میں 24 کروڑ سے ادا کرنا ہوں گے، احتساب عدالتوں میں سالانہ 60 لاکھ کا پانی پیا جائے گا جب کہ گرم اور سرد موسم پر 24 لاکھ خر چ ہوں گے۔رپورٹ میں مزید کہا گیا ہے کہ احتساب عدالتوں میں فون کی مد میں ایک کروڑ 80 لاکھ ، اخبارات، پیروڈیکلز اور کتابوں پر 4 کروڑ 80 لاکھ جب کہ پرنٹنگ پبلیکیشن پر 3 کروڑ 60 لاکھ سالانہ خرچ ہوں گے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں