0

روئی کے گالوں جیسی سفید، نایاب اور خیمہ ساز چمگادڑیں

ہنڈورس: چمگادڑوں کو قدرے پراسرار اور خوفناک اور خون آشام بھی سمجھا جاتا ہے لیکن لاطینی امریکا کے بعض ممالک میں نرم اور سفید چمگادڑوں پر بے اختیار پیار آتا ہے جنیہں وائٹ ٹینٹ میکنگ بیٹ کہا جاتا ہے۔یہ چمگادڑوں غاروں میں رہنے کی بجائے درختوں پر رہتی ہیں اور ان میں ہنڈورس کی چمگادڑ جسامت کے لحاظ سے سب سے چھوٹی ہوتی ہیں۔ کرہ ارض پر اس وقت چمگادڑوں کی 1300 سے زائد اقسام پائی جاتی ہیں لیکن ان میں سفید رنگت والی صرف پانچ انواع ہی دیکھی گئی ہیں۔یہ تمام چمگادڑیں دنیا کی چھوٹی ترین انواع میں شمار ہوتی ہیں اور ان میں سے سب سے بڑی قسم کی جسامت صرف 5 سینٹی میٹر ہے۔خیمہ ساز چمگادڑیںلاطینی اور شمالی امریکا کی ان خوبصورت چمگادڑوں کو خیمہ ساز مخلوق بھی کہا جاتا ہے کیونکہ یہ درخت کے پتوں کو موڑکر انہیں خیمے کی شکل دیتے ہیں۔ چمگادڑیں پتے کی باریک رگوں کو کترتی ہیں جن سے پتا خمیدہ ہوکر خیمے کی شکل اختیار کرلیتا ہے۔ماہرین کہتے ہیں کہ سفید ہونے کی وجہ سے یہ شکاریوں نظر نہیں آتیں کیونکہ جن جنگلوں میں یہ اپنا گھر بناتی ہیں وہاں سورج کی روشنی جب پتوں سے گزر کر اس مخلوق پر پڑتی ہے تو وہ بھی سبز دکھائی دیتی ہے اور یوں شکاری جانور اسے پہچان نہیں سکتے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں