0

سانحہ بلدیہ پر بننے والی فلمڈسکانٹ ورکرز انٹرنیشنل فلم فیسٹیول میں پیش ہوگی

کراچی: کراچی میں 8 سال قبل ہونے والے سانحہ بلدیہ پر بننے والی فلم ڈسکانٹ ورکرز انٹرنیشنل فلم فیسٹیول میں پیش کی جائے گی۔کراچی کے علاقے بلدیہ ٹان میں 8 سال قبل ایک کپڑا بنانے والی فیکٹری میں خوفناک آتشزدگی کے باعث فیکٹری میں کام کرنے والے سینکڑوں ملازمین لقمہ اجل بن گئے تھے۔ اس موضوع پر پاکستان اور جرمنی کے اشتراک سے بننے والی فلم ڈسکانٹ ورکرز کا پریمیئردنیا کے سب سے بڑے انسانی حقوق کیون ورلڈ فلم فیسٹیول میں 11 ستمبر ہوگا۔رواں ماہ 11 ستمبر کو سانحہ بلدیہ کو 8 سال ہوجائیں گے اور یہ فلم اس سانحے کی آٹھویں برسی کے موقع پر یورپی ملک چیک ری پبلک کے شہر پراگ میں منعقد ہونے والے فلم فیسٹیول میں دکھائی جائے گی۔ڈسکانٹ ورکرز ایک فیچر ڈاکیومنٹری فلم ہے جس میں سعیدہ خاتون سمیت ان تمام لوگوں کی کہانی دکھائی گئی ہے جنہوں نے اپنے بچوں کو اس سانحے میں کھودیا تھا۔ اس کے علاوہ فلم میں دکھایا گیا ہے سعیدہ خاتون انصاف کے لیے کراچی کی عدالتوں سے لے کر یورپی عدالتوں اور جرمنی کے مختلف شہروں میں جدوجہد کرتی ہیں اور کپڑے کے ایک جرمن برانڈ کے آئی کے کیآٹ لیٹ کے باہر مظاہرہ کرتی ہیں۔ ان کمپنیوں نے بلدیہ فیکٹری کو سیفٹی سرٹیفکیٹ جاری کیاتھا۔یہ فلم پاکستانی اور جرمن پروڈکشن کے اشتراک سے بنائی جارہی ہے جب کہ اس کی ہدایت کاری بھی پاکستانی فلمساز عمار عزیز اور جرمن فلمساز کرسٹوفر پاٹز نے کی ہے اور فلم کو ویرونیکا جنتکوانے پروڈیوس کیا ہے۔ اس فلم میں عام محنت کش طبقے کا قریب سے مشاہدہ کیا گیا ہے۔فلم کے ہدایت کار عمار عزیز کا کہنا ہے کہ فلم سانحہ بلدیہ کی برسی کے موقع پر کراچی میں جلی ہوئی فیکٹری کے مقام پر دکھائی جانی تھی لیکن کورونا وبا کے باعث فلم کی نمائش صورتحال بہتر ہونے تک موخر کردی گئی ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں