0

خطرناک سائیڈ ایفیکٹ کے باعث بند آکسفورڈ یونیورسٹی کی کورونا ویکسین ٹرائل بحال

لندن: ایک رضا کار میں خطرناک سائیڈ ایفیکٹس سامنے آنے پر مزید تحقیق کے لیے بند ہونے والی کورونا ویکسین کا ٹرائل دوبارہ بحال کردیا گیا۔عالمی خبر رساں ادارے کے مطابق بین الاقوامی دوا ساز کمپنی آسٹرا زینیکا کی کورونا ویکسین AZ1222 کا رضاکاروں پر ٹرائل جاری تھا کہ اس آزمائش کے دوران کے ایک شخص میں شدید مضر اثرات نظر آنے پر کورونا ویکسین کا ٹرائل چند روز قبل بند کردیا گیا تھا جسے اب دوبارہ بحال کردیا گیا ہے۔دوا ساز کمپنی آسٹرا زینیکا کے ترجمان نے امریکی سینیٹ میں دیئے گئے بیان میں بتایا کہ یہ ٹرائل 18 ہزار رضاکاروں پر ہو رہا تھا اور اتنے بڑے پیمانے پر ہونے والے ٹرائل میں سائیڈ ایفیکٹ کا نظر آجانا ممکن ہوتا ہے۔ ٹرائل کو فی الحال برطانیہ کے لیے بحال کیا گیا ہے اور دیگر ممالک میں بھی جلد ٹرائل بحال ہوجائیں گے۔دوا ساز کمپنی نے اس بات کا بھی اعادہ کیا کہ ویکسین کو مکمل طور پر محفوظ ہونے کی صورت میں ہی مارکیٹ میں لایا جائے گا۔ جلد بازی کے بجائے مکمل اور اطمینان بخش تحقیق کو یقینی بنایا جائے گا اور ٹرائل کے نتائج سے پوری دنیا کو آگاہ کیا جائے گا۔واضح رہے کہ برطانیہ میں جاری ٹرائل کے دوران ایک رضاکار میں ایسی پراسرار بیماری سامنے آئی تھی جس کی وضاحت کرنا فی الوقت مشکل ہے جس کے بعد ٹرائل کے آخری مرحلے میں داخل ہونے والی ویکسین کے ٹرائل کو روک دیا گیا تھا۔

کیٹاگری میں : صحت

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں