0

سائنسدانوں نے مختصر ترین وقت کی پیمائش کرلی!


برلن: جرمن ماہرین نے وقت کے مختصر ترین دورانیے کی پیمائش کرلی ہے جو صرف 247 زیپٹو سیکنڈ ہے۔ وقت کی یہ پیمائش ایک فوٹون کو ہائیڈروجن ایٹم کے ایک سرے سے دوسرے کونے تک کا فاصلہ (53 پیکومیٹر) طے کرنے کے مشاہدے میں کی گئی ہے، جو آج تک کی انسانی تاریخ میں وقت کی مختصر ترین پیمائش ہے۔ پہلے وقت کی مختصر ترین پیمائش کا ریکارڈ بھی جرمن سائنسدانوں ہی نے قائم کیا تھا، جو 850 زیپٹو سیکنڈ تھا۔ نیا ریکارڈ اس سے بھی 3.4 گنا مختصر ہے۔بتاتے چلیں کہ ایک زیپٹو سیکنڈ (zeptosecond) سے مراد ایک سیکنڈ کے ایک ارب ویں حصے کے بھی ایک ارب ویں حصے کا ایک ہزارواں حصہ ہوتا ہے۔وقت کا یہ دورانیہ اتنا مختصر ہے کہ اگر ہم ایک زیپٹو سیکنڈ کو ایک سیکنڈ تصور کریں تو ہمارے مروجہ ایک سیکنڈ کا دورانیہ 31,700 ارب سال (اکتیس ہزار سات سو ارب سال) جتنا ہوجائے گا یعنی ہماری کائنات کی موجودہ عمر (13 ارب 80 کروڑ سال) کے مقابلے میں بھی 2,365 گنا زیادہ!وقت کی مختصر ترین پیمائش یہ تازہ کارنامہ گوٹے یونیورسٹی فرینکفرٹ، ڈوئچے الیکٹرون سنکروٹرون ایکسلیریٹر (DESY) ہیمبرگ اور فرٹز ہیبر انسٹی ٹیوٹ برلن کے سائنسدانوں نے مشترکہ طور پر انجام دیا ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں