0

اس ہولوگرام کو کھایا بھی جاسکتا ہے!


ابو ظہبی: متحدہ عرب امارات کی جامعہ خلیفہ میں سائنسدانوں نے ایسا ہولوگرام اسٹیکر تیار کرلیا ہے جسے کھا کر ہضم بھی جاسکتا ہے۔واضح رہے کہ حالیہ برسوں کے دوران مختلف اصلی مصنوعات کی شناخت میں اسٹیکر جیسے تھری ڈی ہولوگرامز کا استعمال بڑھتا جارہا ہے کیونکہ ان کی قیمت مسلسل کم ہوتی جارہی ہے۔اب تک کاغذ، لکڑی اور پلاسٹک پر ہولوگرامز چھاپنے میں کامیابی حاصل کی جاچکی ہے، تاہم کھانے پینے کی چیزوں میں صرف چاکلیٹ پر ہولوگرام بنانے میں ہی نہایت محدود کامیابی مل سکی ہے۔انہی کوششوں کو مزید آگے بڑھاتے ہوئے، جامعہ خلیفہ کے ڈاکٹر بدرالقطان اور ایسوسی ایٹ پروفیسر ڈاکٹر حیدر بٹ کی سربراہی میں ایک تحقیقی ٹیم نے کورن سیرپ اور وینیلا میں پانی ملا کر ایسے ہولوگرام تیار کیے ہیں جنہیں کھانے پینے کی کسی بھی چیز (مثلا پھل) پر بھی نقش کیا جاسکے گا اور آرام سے کھایا بھی جاسکے گا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں