0

گٹھیا کا علاج… ایک سے بہتر 2 دوائیں


شی گن: امریکی ماہرین نے دریافت کیا ہے کہ اگر شدید اور ناقابلِ علاج گٹھیا کے مریضوں کو مدافعتی نظام کا ردِعمل محدود کرنے والی دوا کے ساتھ ساتھ گٹھیا کی ایک دوا کرسٹیکسا بھی دی جائے تو انہیں فائدہ ہوتا ہے۔واضح رہے کہ خون میں یورک ایسڈ بڑھنے کی وجہ گٹھیا کا مرض لاحق ہوتا ہے جس کا سب سے نمایاں اثر جوڑوں میں سختی، درد اور سوجن کی شکل میں ظاہر ہوتا ہے۔ویسے تو گٹھیا کی کئی دوائیں موجود ہیں لیکن اکثر مریضوں کیلیے کرسٹیکسا (Krystexxa) نامی دوا تجویز کی جاتی ہے جو خون میں یورک ایسڈ کی مقدار کم کرتے ہوئے مریض کو آرام پہنچاتی ہے۔ تاہم بیماری سے بچانے والے قدرتی مدافعتی نظام (امیون سسٹم) کا ردِعمل اس دوا کی کارکردگی متاثر کرتے ہوئے اس میں کمی کردیتا ہے۔

کیٹاگری میں : صحت

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں