0

دو رخی نینوذرات سے بجلی پیدا کرنے کا انوکھا کارنامہ


بوسٹن: ایم آئی ٹی کے انجینیئروں نے ایک آلہ بنایا ہے جو ایک بالکل نئے نظام کے تحت بجلی بناتا ہے۔ اس میں باریک ذرات استعمال ہوتے ہیں جو کاربن نینوٹیوب سے بنائے گئے ہیں۔ ان ذرات کو ایک نامیاتی محلول میں ڈبویا جاتا ہے جس کے بعد کرنٹ ایک سے دوسرے مقام تک بہنا شروع ہوجاتا ہے اور یوں چھوٹے روبوٹس بھی چلائے جاسکتے ہیں۔ ہم جانتے ہیں کاربن نینوٹیوبس بجلی کی بہترین موصل ہوتی ہیں اور ایم آئی ٹی کے سائنسدانوں نے اس کا بہترین طریقہ تلاش کیا ہے۔ انہوں نے نینوٹیوب کے آدھے حصے پر ٹیفلون جیسا پالیمر (غلاف کی صورت میں) چڑھایا جو الیکٹرون کو نینوٹیوب کے غلافی حصے سے الیکٹرون غیرغلافی حصے تک جانے دیتا ہے۔ اب جوں ہی کاربن نینوٹیوب کو نامیاتی محلول میں ڈالا گیا تو انہوں نے وہاں سے الیکٹرون کھینچنا شروع کئے اور بجلی کا بہا جاری ہوگیا۔ایم آئی ٹی کے انجینیئر مائیکل اسٹرینو کہتے ہیں کہ محلول میں الیکٹرون بھرے ہیں اور پورا نظام خود کو معتدل رکھنے کے لیے الیکٹرون دیتا رہتا ہے۔ اس میں بیٹری سازی کی کیمیا استعمال نہیں ہوئی ہے بلکہ ذرات کو محلول میں رکھا جاتا ہے اور یوں الیکٹرون کا بہا شروع ہوجاتا ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں