0

ملک بھر میں گھی اور خوردنی تیل کا بحران پیدا ہونے کا خدشہ


کراچی: وفاقی بجٹ میں فاٹا پاٹا میں6 تا 8 صنعتوں کو ڈیوٹی فری خام مال درآمد کرنے کی سہولت دینے پر ملک بھر میں قائم 122 گھی ساز ملوں نے اپنی ملیں بند کرنے کی دھمکی دیدی ہے۔مقامی مارکیٹ میں گھی اورخوردنی تیل کا بحران پیدا ہونے کا خدشہ ہوگیا ہے۔ پاکستان وناسپتی مینوفیکچر ایسوی ایشن نے وزیر خزانہ شوکت ترین کو خط کے ذریعے اپنے تحفظات سے بھی آگاہ کردیا ہے۔ایسوسی ایشن کے سابق وائس چئیرمین شیخ عمر ریحان نے ایکسپریس کو بتایا کہ اگر ہمارے مطالبات تسلیم نہ کییگئے تو گھی ملیں بند کردیں گے کیونکہ فاٹا اور پاٹا کی چند ملوں کو ٹیکس چھوٹ کے فیصلے کے بعد ملیں چلانا ممکن نہیں رہے گا۔ منظم شعبے کی تمام گھی وخوردنی تیل کی ملیں 35فیصد ڈیوٹی وٹیکسوں کی ادائیگی کرکے خام مال درآمد کرتی ہیں جب کہ اب فاٹا پاٹا کی چند ملیں ڈیوٹی وٹیکس فری خام مال درآمد کرکے پوری صنعت سے صحت مند مسابقت کی فضا ختم کرکے مقامی مارکیٹ میں اجارہ داری قائم کرلیں گی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں