0

یہ پیوند حسبِ ضرورت انسولین خارج کرسکتا ہے


نیویارک: تھری ڈی پرنٹنگ اور جدید ترین حیاتیاتی مادوں سے ایک پیوند (امپلانٹ) تیار کیا گیا ہے جو ٹائپ ون ذیابیطس مریضوں کے لیے حسبِ ضرورت انسولین خارج کرتا رہے گا۔یہ تحقیق اپنے آخری مراحل میں ہے جسے رائس یونیورسٹی کے بایو انجینیئر نے ڈیزائن کیا ہے۔ اسے ذیابیطس کی عالمی تنظیم جے ڈی آر ایف نے ڈیزائن کیا ہے۔ یہ کاوش دو پی ایچ ڈی طالبہ اور ان کے استاد نے کی ہے جن کے نام اومید وائسے اور جورڈن مِلر ہیں۔ جورڈن مِلر گزشتہ 15 برس سے ایسے پیوند کی تیاری کررہے ہیں اور انہیں نے ایک خاص تکنیک واس کلچر استعمال کی ہے جس میں خون کی باریک نالیوں کو استعمال کیا جاسکتا ہے اور اب اسے وہ تھری ڈی پرنٹنگ کی طرف لے آئے ہیں۔اس میں انسانی خلیاتِ ساق (اسٹیم سیل) کو بایوانجنیئرنگ سے بدل کر ایسیبی ٹا خلیات میں بدلا گیا ہے جو وقت پڑنے پر انسولین کی درست مقدار خارج کرتے ہیں۔ اس طرح خون میں شکر(گلوکوز) کی مقدار کو ایک خاص درجے پر رکھا جاسکتا ہے۔

کیٹاگری میں : صحت

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں