0

بار اور بینچ میں فاصلے؛ جسٹس مشیر عالم کو عشائیہ بھی نہ دیا گیا


اسلام آباد: ہر گزرتے دن کے ساتھ بار اور بینچ کے درمیان فاصلے بڑھنے لگے، وکلا کی جانب سے آئے روز احتجاج کیا جارہا ہے اور سپریم کورٹ کے سینئر ترین جج جسٹس مشیر عالم کو ریٹائرمنٹ کے موقع پر عشائیہ بھی نہ دیا گیا۔پاکستان بار اور سپریم کورٹ بار کے نمائندوں نے جسٹس محمد علی مظہر کی تقریب حلف برداری کا بھی بائیکاٹ کیا۔ گزشتہ کچھ عرصہ سے ہر گزرتے دن کے ساتھ پاکستان کی اعلی عدلیہ اور سب سے بڑی بارز ایسوسی ایشنز پاکستان بار کونسل اور سپریم کورٹ بار کے درمیان فاصلے بڑھ رہے ہیں جس کی واضح مثالیں گزشتہ کچھ عرصے میں ہونیوالے واقعات ہیں۔ وکلا کے جوڈیشل کمیشن کی قواعد اور ججز کی تقرریوں کے حوالے سے اختلافات تھے ۔وکلا کی جانب سے ڈیمانڈ کی جارہی ہے کہ ججز کی تقرریوں میں پاکستان بار کونسل کے کردار کو اہمیت دی جائے ۔ ووٹنگ کی بنیاد پر ججز اپنے فیصلے کرتے ہیں اور وکلا کی رائے کو اہمیت نہیں دی جا رہی تاہم وکلا اور اعلی عدلیہ کے درمیان مزید فاصلے اس وقت بڑھے جب سندھ سے پانچویں نمبر کے سینئر جج جسٹس محمد علی مظہر کو سپریم کورٹ لانے کیلئے نامزد کیا گیا جس پر پاکستان بار کونسل نے ملک گیر ہڑتال کا اعلان کیا اور ہر سطح پر احتجاج کیا گیا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں